اسلام آباد(آئی پی ایس)پاکستان نے بھارتی حکومت سے تاریخی بابری مسجد کو اس کی اصل جگہ پر دوبارہ تعمیر کرنے اور اس کی تباہی کے ذمہ دار مجرموں کو سزا دینے کا مطالبہ کیا ہے۔

 

دفتر خارجہ کی ترجمان نے ہندو انتہا پسندوں کے ہاتھوں تاریخی بابری مسجد کی شہادت کے 30 سال مکمل ہونے کے موقع پر منگل کو ایک بیان میں بابری مسجد کی جگہ پر ہندو مندر کی جاری تعمیر کی مذمت کی۔

 

بھارت میں بڑھتے ہوئے اسلامو فوبیا اور نفرت انگیز جرائم کا نوٹس لینے کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے پاکستان نے بین الاقوامی برادری، اقوام متحدہ اور متعلقہ بین الاقوامی اداروں سے اپیل کی کہ وہ انتہا پسند ”ہندوتوا“ حکومت سے بھارت میں اسلامی ورثے کے مقامات کے تحفظ کے لیے اپنا کردار ادا کریں۔بیان میں کہا گیا ہے کہ آج بھارت کے شہر ایودھیا میں ہندو انتہا پسندوں کے ہاتھوں تاریخی بابری مسجد کے انہدام کی 30 ویں برسی ہے،

 

یہ موقع بھارت میں اس وقت سے بڑھتے ہوئے مسلم مخالف جنون کی ایک افسوسناک یاد دہانی ہے۔ ترجمان نے کہا کہ ہم بابری مسجد کی تباہی کے ذمہ دار مجرموں کی بریت کی مذمت کرتے ہیں۔

 

ترجمان نے اپنے بیان میں کہا کہ بھارت میں ہندو بالادست گروہ وارانسی کی گیانواپی مسجد سمیت کچھ دیگر مساجد کو مندروں میں تبدیل کرنے کا مطالبہ کررہے ہیں، ان مطالبات سے بابری مسجد جیسے مزید واقعات ہوسکتے ہیں۔ ترجمان نے کہا کہ بھارتی مسلمانوں کی مذہبی آزادیوں پر مسلسل حملہ ہورہا ہے، بھارت میں حکمران جماعت بدستور مسلمانوں کے خلاف جذبات کو بھڑکا کر نفرت کو ہوا دے رہی ہے۔

 

انہوں نے کہا کہ جیسا کہ اسلامی تعاون تنظیم (او آئی سی) نے اپنے مختلف اعلانات کے ذریعے مطالبہ کیا ہے، ہم بھارتی حکومت سے مطالبہ کرتے ہیں کہ بابری مسجد کو اس کی اصل جگہ پر دوبارہ تعمیر کیا جائے اور اس کی تباہی کے ذمہ دار مجرموں کو سزا دی جائے۔

 

ترجمان نے اپنے بیان میں مزید کہا کہ بین الاقوامی برادری کو بھارت میں بڑھتے ہوئے اسلامو فوبیا، نفرت انگیز تقاریر اور نفرت انگیز جرائم کا نوٹس لینے کی ضرورت ہے۔ ہم بین الاقوامی برادری، اقوام متحدہ اور متعلقہ بین الاقوامی اداروں سے اپیل کرتے ہیں کہ وہ انتہا پسند ”ہندوتوا“ حکومت سے بھارت میں اسلامی ورثے کے مقامات کے تحفظ کے لیے اپنا کردار ادا کریں۔

 

انہوں نے کہا کہ بھارتی حکومت کو اقلیتوں بالخصوص مسلمانوں اور ان کی عبادت گاہوں کے تحفظ کو یقینی بنانا چاہیے۔