تحریر :فیصل زاہد ملک

صدر شی جن پنگ کی بہترین سفارتی اور امریکہ اور چین کے درمیان کشیدگی کے درمیان پرامن بات چیت کا عزم عالمی تعاون اور مشترکہ ترقی کی راہ کو ظاہر کرتا ہے۔

چین کے صدر شی جن پنگ کے ایشیا پیسفک اکنامک کوآپریشن کے سالانہ سربراہ اجلاس میں شرکت کے لیے امریکہ کا دورہ کرنے کے فیصلے کو سفارتی حلقوں میں سراہا جا رہا ہے کیونکہ اس سے دونوں سپر پاورز کے درمیان کشیدہ تعلقات کے پس منظر میں امریکی صدر جو بائیڈن کے ساتھ اہم ملاقات کی راہ ہموار ہوئی ہے۔ دونوں رہنماؤں نے علاقائی اور عالمی امن، سلامتی اور پیش رفت سے براہ راست یا بالواسطہ طور پر منسلک متعدد اقدامات پر اتفاق کیا، جو ایک سال میں پہلی بار آمنے سامنے ہونے والی بات چیت میں پیش رفت کی عکاسی کرتا ہے۔

بات چیت کے دوران اور اس کے بعد دونوں رہنماؤں کے ریمارکس سے دونوں ممالک کے عزائم اور بامعنی دوطرفہ روابط کی ضرورت کا ایک وسیع اشارہ ملتا ہے۔ شی جن پنگ نے اپنے افتتاحی کلمات میں کہا کہ چین اور امریکہ جیسے دو بڑے ممالک کے لیے ایک دوسرے سے منہ موڑنا کوئی آپشن نہیں ہے۔ سیارہ زمین اتنا بڑا ہے کہ دونوں ممالک کامیاب ہو سکتے ہیں۔ اور صدر بائیڈن نے اس بات پر زور دیا کہ “ہمیں اس بات کو یقینی بنانا ہوگا کہ مسابقت تنازعات کی طرف نہ جائے”” “موسمیاتی تبدیلی سے لے کر انسداد منشیات سے لے کر مصنوعی ذہانت تک ہمیں درپیش اہم عالمی چیلنجز ہماری مشترکہ کوششوں کا مطالبہ کرتے ہیں۔

اس میں کوئی شک نہیں کہ دونوں ممالک اب بھی کئی اہم معاملات پر اختلاف رکھتے ہیں لیکن فوجی تعاون کو دوبارہ شروع کرنے کے لئے ان کی مفاہمت نہ صرف چین اور امریکہ بلکہ باقی دنیا کے لئے بھی اچھی علامت ہے کیونکہ اب دونوں ممالک کے رہنما ممکنہ تنازع یا غلط فہمی کی صورت میں فون اٹھا کر ایک دوسرے سے بات چیت کرسکیں گے۔ دونوں افواج کے درمیان مواصلات کی کھلی لائنوں کو برقرار رکھنا ضروری ہے تاکہ غلط فہمیوں اور غلط اندازوں سے بچا جا سکے جو بحران یا تنازعہ کا سبب بن سکتے ہیں۔

یہ ایک ریکارڈ کی بات ہے کہ چینی قیادت نے معاشی، سفارتی اور تزویراتی امور پر امریکہ کی طرف سے مسلسل اشتعال انگیزی کے سامنے انتہائی تحمل کی پالیسی پر عمل کیا۔ صدر شی جن پنگ اور صدر بائیڈن نے ایک سال قبل انڈونیشیا کے شہر بالی میں ملاقات کی تھی جس میں مختلف سطحوں پر باہمی روابط کو بڑھانے پر اتفاق کیا گیا تھا لیکن یہ پیش رفت اس وقت رک گئی جب امریکہ نے 14 فروری کو مشرقی ساحل پر ایک چینی غبارے کو جاسوس غبارے کے طور پر مار گرایا۔ تاہم چین کا کہنا ہے کہ یہ جاسوسی نہیں بلکہ موسم ی تحقیق کے لیے ہے۔ چین کے وزیر خارجہ وانگ یی نے امریکی اقدام کو بین الاقوامی اصولوں کی خلاف ورزی قرار دیتے ہوئے کہا کہ میزائل سے غبارے کو مار گرانے کے لیے ایک جدید لڑاکا طیارہ بھیجنا ناقابل یقین ہے۔ امریکہ چین کی جانب سے ملبہ واپس کرنے کے جائز مطالبے کو بھی قبول نہیں کر رہا، جسے سفارتی حلقے ایک اور اشتعال انگیزی کے طور پر دیکھ رہے ہیں۔

حالیہ سربراہی اجلاس کے دوران امریکی صدر نے تائیوان کے معاملے پر چین کے خدشات کو دور کرنے کی کوشش کرتے ہوئے اس بات کا اعادہ کیا کہ امریکہ ایک چین پر یقین رکھتا ہے لیکن ساتھ ہی یہ بھی کہا کہ ان کا ملک تائیوان کو فوجی مدد فراہم کرتا رہے گا۔ چینی رہنما نے اپنے امریکی ہم منصب سے کہا کہ جزیرہ چین کا حصہ ہے، امریکا کو چاہیے کہ وہ تائیوان کو مسلح کرنا بند کرے اور چین کے پرامن اتحاد کی حمایت کرے جسے روکنا ممکن نہیں۔ یہ امریکہ کے لیے واضح پیغام تھا، جس نے اس سے قبل اس وقت کے امریکی ایوان نمائندگان کی اسپیکر نینسی پلوسی کے تائیوان کے دورے کے دوران اس معاملے پر کشیدگی میں اضافہ کیا تھا، جس کے نتیجے میں چین اور امریکہ کے درمیان فوجی تعلقات منقطع ہو گئے تھے۔

جہاں تک معاشی نظریات کے اختلاف ات کا تعلق ہے تو صدر شی جن پنگ نے واضح طور پر کہا کہ چین کی تکنیکی ترقی کو دبانا چین کی اعلیٰ معیار کی ترقی کو روکنے اور چینی عوام کو ترقی کے حق سے محروم کرنے کے اقدام کے سوا کچھ نہیں ہے۔ شی جن پنگ نے اجلاس میں برآمدی کنٹرول، سرمایہ کاری کے جائزے اور پابندیوں کا ذکر کیا اور امریکہ پر زور دیا کہ وہ پابندیاں اٹھائے اور چینی کمپنیوں کے لیے غیر امتیازی ماحول فراہم کرے۔ واضح رہے کہ اگست میں صدر بائیڈن نے چینی سیمی کنڈکٹر، کوانٹم کمپیوٹنگ اور مصنوعی ذہانت کے شعبوں میں امریکی سرمایہ کاری کو روکنے کے لیے ایک ایگزیکٹو آرڈر جاری کیا تھا۔ انتظامیہ کا کہنا تھا کہ ان مصنوعات کی فوجی ایپلی کیشنز ہوسکتی ہیں۔ سرمایہ کاری کی نئی پابندیوں کے اعلان کے فورا بعد چین نے سیمی کنڈکٹر کی پیداوار کے لیے ضروری دو اہم معدنیات گیلیم اور جرمینیم کی برآمد پر پابندی عائد کر دی۔

فریقین نے مصنوعی ذہانت پر بھی تبادلہ خیال کیا جو جدید ترین ٹیکنالوجی ہے جو دنیا کو تکنیکی ترقی کے ایک نئے دور کی طرف لے جا رہی ہے لیکن یہ کسی ٹھوس تفہیم یا تعاون کے طریقہ کار میں تبدیل نہیں ہوسکا۔ فینٹانل کی پیداوار سے نمٹنے کی کوششوں میں پیش رفت ہوئی ہے ، مصنوعی اوپیوئڈ جو مبینہ طور پر امریکہ میں منشیات کی زیادہ مقدار کی سب سے بڑی وجہ ہے۔

سفارتی حلقوں کا کہنا ہے کہ امریکہ کی جانب سے متعدد اشتعال انگیز اقدامات کے باوجود صدر شی جن پنگ نے ہمیشہ کی طرح امن اور مشترکہ خوشحالی کے اپنے وژن کے مطابق انتہائی حد تک پابندیوں کا مظاہرہ کیا جو ان کے تاریخی بیلٹ اینڈ روڈ انیشی ایٹو کی بنیاد بنی۔ انہوں نے جون میں بیجنگ میں امریکی وزیر خارجہ انٹونی بلنکن کا کھلے دل سے استقبال کیا تھا، جو تقریبا نصف دہائی میں چینی دارالحکومت کا دورہ کرنے والے واشنگٹن کے اعلیٰ ترین عہدیدار تھے۔ انہوں نے بیجنگ میں بل گیٹ سمیت کاروباری رہنماؤں کا بھی استقبال کیا۔

دونوں ممالک، جو دنیا کے سب سے بڑے کاربن اخراج کرنے والے ممالک ہیں، نے موسمیاتی تبدیلی سے نمٹنے کے لئے مزید اقدامات پر اتفاق کیا، لیکن جیواشم ایندھن کے استعمال کو ختم کرنے کے عزم سے گریز کیا. انہوں نے میتھین کے اخراج کو سست کرنے کے لئے تعاون کرنے کا وعدہ کیا – ایک خاص طور پر طاقتور گرین ہاؤس گیس – اور 2030 تک قابل تجدید توانائی کو تین گنا کرنے کی عالمی کوششوں کی حمایت کریں گے۔ دونوں ممالک نے قابل تجدید توانائی کے ایک نئے ہدف کی حمایت کی اور کہا کہ وہ میتھین اور پلاسٹک کی آلودگی کو کم کرنے کے لئے کام کریں گے ، آب و ہوا کے تعاون کی تجدید جو پیلوسی کے تائیوان کے دورے کا بھی نتیجہ تھا۔

یقینا مشرق وسطیٰ کی صورت حال پر اختلافات تھے جس پر چین کا اقوام متحدہ کی قراردادوں کے مطابق اصولی موقف ہے لیکن امریکہ یکطرفہ طور پر یہودی ریاست کی حمایت کرتا ہے جو اس وقت غزہ میں فلسطینیوں کی نسل کشی میں ملوث ہے۔ چین اسرائیل اور حماس کے درمیان جنگ بندی کا مطالبہ کرتا ہے لیکن امریکہ اس معاملے پر سلامتی کونسل کی قراردادوں کو ویٹو کر رہا ہے۔

علاقائی اور عالمی تنازعات پر رائے اور نقطہ نظر کا اختلاف بھی دونوں ممالک کی قومی حکمت عملی سے مطابقت رکھتا ہے۔ امریکہ دنیا میں تنازعات کی وجوہات میں سے ایک رہا ہے جبکہ چین کو وسیع پیمانے پر بقائے باہمی اور باہمی تعاون کا چیمپیئن سمجھا جاتا ہے۔ دنیا امن کے نخلستان میں تبدیل ہوسکتی ہے اگر امریکہ اور دیگر طاقتور ممالک بھی پرامن بقائے باہمی کی پالیسیوں کی پیروی کریں اور ترقی و ترقی کے ثمرات کو بانٹیں جیسا کہ چین صدر شی جن پنگ کی متحرک قیادت میں کر رہا ہے۔